پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس کورم کی وجہ سے ملتوی کر دیا گیا۔

29

اسلام آباد:

قومی اسمبلی کے اسپیکر راجہ پرویز اشرف نے منگل کو پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس ہاؤس آف کامنز میں متعلقہ "وزارتی غیر حاضری” کی مسلسل کمی کی وجہ سے ملتوی کر دیا۔

کچھ قانون سازوں نے کابینہ کے وزراء کی غیر حاضری پر سخت اعتراض کیا اور بہت سے لوگوں نے کہا کہ اجلاس منعقد کرنا اور پیسہ ضائع کرنا فضول ہوگا۔

سردار ریاض محمود خان مزاری نے کہا کہ ‘خالی ایوانوں’ سے نمٹنے سے بہتر ہو گا کہ پارلیمنٹ کو تحلیل کر دیا جائے۔

چیئرمین نے کہا کہ اگلی تحریک پارلیمانی امور کے وزیر مرتضیٰ جاوید عباسی نے جمع کرائی ہے تاکہ جامع بحث کی جائے اور قومی مسائل کو مناسب طریقے سے حل کرنے کے طریقے تلاش کیے جائیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ تمام متعلقہ وزراء کو ہاؤس آف کامنز میں موجود ہونا چاہیے کیونکہ آٹھ مختلف وزارتوں کے حوالے سے آٹھ اہم ایجنڈا آئٹمز زیر بحث ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہر رکن کے لیے ایجنڈے کے کسی آئٹم پر بات کرنا مناسب نہیں۔

مسلم لیگ (ن) کے ایم این اے سعد وسیم شیخ نے اپنے متعلقہ ساتھیوں اور قومی اسمبلی کے مقررین کے تحفظات سے اتفاق کرتے ہوئے چیئرمین پر زور دیا کہ وہ اجلاس ملتوی کر دیں۔

انہوں نے ایوان نمائندگان کو یقین دلایا کہ آئندہ اجلاس تک تمام متعلقہ وزراء ایوان میں حاضر ہو سکیں گے۔

اس توثیق کے لیے چیئر قومی اسمبلی نے سینیٹ اور قومی اسمبلی کا مشترکہ اجلاس ملتوی کر دیا اور 28 فروری کو دوبارہ اجلاس ہوا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین