جسٹس مظاہر نقوی نے شوکاز نوٹس کا جواب دینے کے بجائے کونسل کی تشکیل پر اعتراض اٹھا دیا

28
جسٹس مظاہر نقوی– فائل فوٹو

سپریم کورٹ کے جسٹس مظاہر نقوی نے شوکاز نوٹس کا جواب دینے کے بجائے سپریم جوڈیشل کونسل کی تشکیل پر اعتراض اٹھا دیا۔

ذرائع کے مطابق جسٹس مظاہر نقوی نے چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور جسٹس سردار طارق پر اعتراض اٹھایا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ جسٹس مظاہر نقوی کی جانب سے جسٹس نعیم اختر افغان پر بھی اعتراض کیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق جسٹس مظاہر نقوی نے سپریم جوڈیشل کونسل میں درج ریفرنس اور شواہد کا تمام ریکارڈ بھی مانگ لیا ہے۔

جسٹس مظاہر نقوی کا کہنا ہے کہ سپریم جوڈیشل کونسل میں شامل ممبران میرے بارے میں جانبدار ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور جسٹس نعیم اختر افغان آڈیو لیکس انکوائری کمیشن کا حصہ ہیں، آڈیو لیکس انکوائری کمیشن کے ممبران کو میرے خلاف جوڈیشل کمیشن کا حصہ نہیں ہونا چاہیے۔

جسٹس مظاہر نقوی کا کہنا ہے کہ انصاف کے تقاضوں کو مدنظر رکھنا چاہیے، چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور جسٹس نعیم افغان کو میرے خلاف کونسل کا حصہ نہیں ہونا چاہیے۔

انہوں نے مزید کہا ہے کہ جانبدار سپریم جوڈیشل کونسل کے جاری اظہار وجوہ کا نوٹس بھی جانبدار ہے جس کا جواب نہیں دیا جاسکتا۔

واضح رہے کہ سپریم جوڈیشل کونسل نے27 اکتوبر کے اجلاس میں انہیں شوکاز نوٹس جاری کیا تھا اور جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی کو 10 نومبر تک جواب جمع کرانے کا کہا گیا تھا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
سونے کی قیمت میں آج کتنے ہزار کا اضافہ ہوا؟ اس وائرل انفیکشن کی علامات کیا ہیں؟ سونے کی فی تولہ قیمت 1200 روپے کم ہوگئی بلنگ میں بے ضابطگیاں، کے الیکٹرک و ڈسکوز کو انکوائری رپورٹ کی سفارشات پر عملدرآمد کا حکم ڈالر 282 روپے 30 پیسے کا ہو گیا برطانوی ایچ آئی وی ویکسین کی آزمائش کے حوصلہ افزا نتائج آئی ایم ایف کے ساتھ نئے قرض پروگرام کیلئے وزارتِ خزانہ کی ورکنگ نئی حکومت کے ساتھ پالیسیز پر کام کرنے کے منتظر ہیں: ڈائریکٹر آئی ایم ایف پاکستان نئے آئی ایم ایف پروگرام میں 6 ارب ڈالر قرضے کی درخواست کرے گا، بلومبرگ نگراں حکومت کی جانب سے لیے گئے مقامی قرضوں کی تفصیلات جاری خیبر پختونخوا کا آئندہ 4 ماہ کا بجٹ تیار وفاقی کابینہ نے رمضان ریلیف پیکج کی منظوری دیدی سونے کی فی تولہ قیمت 2 لاکھ 15 ہزار کی سطح پر مستحکم پاکستان نے رواں مالی سال کے پہلے 6 ماہ میں 7.3 ارب ڈالر کی ادائیگیاں کیں،اسٹیٹ بینک آئی ایم ایف کے 26 میں سے 25 اہداف پر عملدرآمد مکمل