عدالت نے پی ٹی آئی کی درخواست پر کے پی میں الیکشن کی تاریخ مانگ لی

25

پشاور:

پشاور ہائی کورٹ نے منگل کو اٹارنی جنرل خیبرپختونخوا اور پاکستان الیکٹورل کمیشن (ای سی پی) سے جواب طلب کر لیا کہ صوبائی اسمبلیاں تحلیل ہونے کے بعد اب صوبائی ووٹ کب ہوں گے۔

جسٹس اشتیاق ابراہیم اور جسٹس سید ارشد علی پر مشتمل پی ایچ سی کے دو ججوں پر مشتمل بنچ پی ٹی آئی رہنماؤں کی جانب سے آئین میں بتائے گئے 90 دن کے اندر انتخابات نہ کرانے کے خلاف درخواست کی سماعت کر رہا ہے۔

بنچ نے کے پی کے اٹارنی جنرل عامر جاوید سے پوچھا کہ الیکشن کی تاریخ کا اعلان ابھی تک کیوں نہیں کیا گیا؟

انہوں نے مزید کہا کہ ووٹنگ کی تاریخ اسی دن دی جانی چاہئے تھی جس دن ریاستی مقننہ کو تحلیل کیا گیا تھا، لیکن اس معاملے میں کوئی جواب بھی نہیں دیا گیا۔

درخواست گزاروں کی نمائندگی کرنے والے وکلاء بشمول شمائل احمد بٹ، معظم بٹ، اور نعمان محب کاکاخیل نے عدالت کو بتایا کہ ریاستی مقننہ کی تحلیل کے 90 دنوں کے اندر ووٹنگ ہونی چاہیے۔

تاہم، انہوں نے دعویٰ کیا کہ کے پی کے گورنر حاجی غلام علی نے ابھی تاریخ کا اعلان کرنا ہے اور وہ جان بوجھ کر ریاست کی سیکیورٹی صورتحال کی آڑ میں اس میں تاخیر کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

ان کا موقف تھا کہ امن و امان کی موجودہ صورتحال میں قومی اسمبلی کی 33 نشستوں پر ضمنی انتخاب ہونا تھا۔

اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ آئین کے آرٹیکل 248 کے تحت عدالت گورنر کو سرکاری فرائض ادا کرنے کی ہدایت نہیں کر سکتی۔

انہوں نے مزید کہا کہ گورنر کو آئینی دفعات کے تحت استثنیٰ حاصل ہے، اسی لیے انہوں نے عدالت میں درخواست دائر نہیں کی۔

جج سید ارشد علی نے انہیں کہا کہ وہ گورنر کے تحفظات کا جائزہ لیتے ہوئے عدالت میں جواب جمع کرائیں۔

اٹارنی جنرل نے انہیں بتایا کہ وہ جنرل سیکرٹری کی رائے اگلی عوامی سماعت میں پیش کریں گے۔

عدالت نے اٹارنی جنرل اور ای سی پی کو نوٹس جاری کرتے ہوئے معاملے پر تحریری جواب طلب کرتے ہوئے سماعت 16 فروری تک ملتوی کردی۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین