شیخ رشید کے کاغذات نامزدگی کو چیلنج کر دیا گیا۔

7

راولپنڈی:

عوامی مسلم لیگ (اے ایم ایل) کے سربراہ اور سابق وزیر داخلہ شیخ رشید احمد کے حلقہ این اے 62 راولپنڈی کے ضمنی انتخاب کے کاغذات اتوار کو چیلنج کر دیے گئے۔ ایکسپریس نیوز.

این اے 62 کے ضمنی انتخاب کے امیدوار ایڈووکیٹ عظمت مبارک نے شیخ رشید کے کاغذات نامزدگی کو چیلنج کر دیا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ ان پر سابق وزیر کے خلاف سنگین الزامات ہیں اور انہوں نے اپنے اثاثوں کو مکمل طور پر ظاہر نہیں کیا۔

شکایت کنندہ نے واپس آنے والے اہلکار (RO) پر پاکستان الیکٹورل کمیشن (ECP) کے "صاف، آزاد اور منصفانہ انتخابات” کے بارے میں شکوک و شبہات پیدا کرنے کا الزام لگایا اور مناسب تحقیقات کرنے میں ناکام رہے۔

مبارک نے کہا، "شیخ رشید کے خلاف بہت سے مجرمانہ مقدمات درج ہیں۔ اگر کوئی امیدوار فوجداری کیس میں ملوث ہے تو وہ الیکشن میں نہیں کھڑا ہو سکتا”۔

انہوں نے مزید کہا کہ مالی اور اسلام آباد کے ساتھ ساتھ دیگر شہروں میں اے ایم ایل رہنماؤں کے خلاف ایف آئی آر درج ہیں۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ شیخ رشید کے پاس لال حویلی کی ملکیت ثابت کرنے کے لیے کچھ نہیں ہے۔

پڑھیں راشد مری کیس میں ضمانت پر رہا

مبارک نے کہا کہ آر او نے راشد کے کاغذات کی جانچ نہیں کی، انہوں نے مزید کہا کہ "امیدواروں کو جانچ کے عمل کے دوران ایک مخصوص وقت پر حاضر ہونا ضروری ہے۔”

انہوں نے کہا کہ شیخ رشید کے کاغذات نامزدگی کی منظوری سے دباؤ کا تاثر ملتا ہے۔

درخواست گزاروں نے نشاندہی کی کہ سابق وزیر نے استعفیٰ دے کر سوال اٹھایا کہ اب وہ کس بنیاد پر الیکشن کو چیلنج کر رہے ہیں۔

انہوں نے سوال کیا کہ اگر انہوں نے استعفیٰ دیا ہے تو آپ کیوں اور کن بنیادوں پر دوبارہ الیکشن لڑ رہے ہیں؟

انہوں نے کہا کہ "شیخ رشید لوگوں کے جذبات سے کھلواڑ کرکے اور ہمدردی حاصل کرکے اپوزیشن امیدواروں کے لیے سیکیورٹی رسک بن رہے ہیں۔”

امیدوار مبارک نے کہا کہ وہ راشد کے کاغذات نامزدگی کو الیکٹورل کورٹ اور ہائی کورٹ میں چیلنج کریں گے اگر ان کی درخواست مسترد ہوتی ہے۔

مزید پڑھ شیخ رشید نے گرفتاری کے بعد ضمانت کے لیے ہائی کورٹ سے رجوع کر لیا۔

ایک روز قبل آر او نے راولپنڈی کے حلقہ این اے 62 میں ضمنی انتخاب کے لیے شیخ رشید کے کاغذات نامزدگی منظور کر لیے تھے۔

جیل حکام نے ریٹرننگ افسران کو بتایا کہ راشد کو آر او نے جانچ پڑتال کے عمل میں حصہ لینے کے لیے طلب کیا تھا، لیکن وہ "سیکیورٹی خدشات کی وجہ سے” عدالت میں پیش نہیں ہو سکے۔

اے ایم ایل کے سربراہ اور سابق ایم این اے سربراہ کے بھتیجے شیخ راشد شفیق نے کہا کہ انہیں جیل سے فون کال پر بتایا گیا کہ سابق وزیر آر او کے سامنے پیش نہیں ہوں گے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ راشد پر کرپشن کا کوئی الزام نہیں ہے۔ انہوں نے کہا، "آج، میں درخواست کرتا ہوں کہ اسلام آباد پولیس ان کے گھر سے لی گئی رقم اور اشیاء حوالے کرے۔”

سابق ایم این اے نے کہا کہ ایک سینئر سیاستدان نے اعلان کیا کہ وہ "خون کے آخری قطرے تک” عمران خان کے ساتھ رہیں گے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
ملک سے اضافی چینی کی برآمد کیلئے راہ ہموار ہونے لگی پی ایس ایکس میں مسلسل دوسرے روز کاروبار کا منفی رجحان نان فائلرز کی موبائل سمز بلاک کرنے کے مثبت اثرات، 7167 نے ٹیکس گوشوارے جمع کرا دیے، ذرائع خسرہ کی بڑھتی وبا، محکمہ صحت پنجاب نے الرٹ جاری کردیا خسرے سے 6 بچوں کی اموات، ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی ٹیم کا متاثرہ علاقے کا دورہ ایل پی جی کی قیمت میں نمایاں کمی سونا آج 2400 روپے مہنگا ہو کر فی تولہ کتنے کا ہو گیا؟ ملک میں مہنگائی میں کمی ہو رہی ہے، رپورٹ وزارت خزانہ ملک میں 3 ہزار ڈبہ پیٹرول پمپ اسٹیشن چل رہے ہیں، چیئرمین اوگرا مرغی کا گوشت مہنگا ہوکر 431 روپے کلو ہو گیا شوگر ایڈوائزری بورڈ کا اہم اجلاس کل لاہور میں طلب پلان کوآرڈینیشن کمیٹی کا اجلاس 31 مئی کو طلب کبیر والا میں خسرہ سے 6 بچے جاں بحق ہوئے: وزیر صحت پنجاب سونے کی فی تولہ قیمت 500 روپے کم ہوگئی تھیلیسمیا و ہیموفیلیا کے پھیلاؤ کی ذمے دار ہماری اپنی غلطیاں ہیں: وزیرِ صحت سندھ