عامر ڈوگر کی گرفتاری سے پی ٹی آئی کی ‘جیل بھرو تحریک’ کھل گئی۔

43

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی "جیل بھرو تحریک” کا آغاز بدھ کو پارٹی رہنما ملک عامر ڈوگر کے ملتان میں پولیس کے سامنے ہتھیار ڈالنے سے ہوا۔ ایکسپریس نیوز رپورٹ

تفصیلات کے مطابق پاکستان الیکٹورل کمیشن (ای سی پی) کے دفتر کے باہر پی ٹی آئی اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں میں اس وقت تصادم ہوا جب حلقہ این اے 155 کے لیے کاغذات نامزدگی جمع کرائے جا رہے تھے۔

ای سی پی نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے قصورواروں کے خلاف کارروائی کی ہدایت کی۔ اس کے فوراً بعد پولیس نے ڈوگر کے گیسٹ ہاؤس (ڈیرہ) پر چھاپہ مارا اور ڈوگر کو پی ٹی آئی کے 10 کارکنوں سمیت گرفتار کر لیا۔

مزید پڑھیں: عمران کو خدشہ ہے کہ اگلے انتخابات میں ‘پی ٹی آئی مخالف پوسٹوں’ کے لیے دھاندلی کی جائے گی

سی سی پی او رانا منصور نے تصدیق کی ہے کہ ڈوگر کے گیسٹ ہاؤس پر چھاپہ مارا گیا اور 10 کارکنوں کو گرفتار کیا گیا۔

ڈی گالے نے پولیس کو بتایا، "اگر ہمارے کسی ملازم کو حراست میں لیا گیا تو میں آپ کے ساتھ جاؤں گا،” مقامی میڈیا نے رپورٹ کیا۔

پولیس نے یہ بھی کہا کہ جھڑپوں میں ملوث مسلم لیگ ن کے کارکنوں کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔

پی ٹی آئی کارکنوں نے گرفتاریوں کے خلاف ملتان میں شاہراہ بلاک کر کے احتجاج کیا اور ٹائر نذر آتش کر دیا۔

پی ٹی آئی کے سینئر رہنما فواد چوہدری نے ایک مقامی نیوز چینل کو بتایا کہ ڈوگر کی گرفتاری سے ان کی پارٹی کی جیل بھرو ایجی ٹیشن مہم شروع ہوئی۔

پی ٹی آئی رہنما فرخ حبیب نے ٹوئٹر پر گرفتاری کی مذمت کی۔ انہوں نے کہا، "PDM کو گندے ہتھکنڈے استعمال کرنا بند کر دینا چاہیے اور عامر ڈوگر کو فوری طور پر رہا کرنا چاہیے۔”

سابق وزیر خزانہ اور پی ٹی آئی کے سینئر رہنما اسد عمر نے کہا کہ گرفتاری ملک میں فاشزم کے پھیلاؤ کی ایک اور مثال ہے۔

پولیس نے جھگڑے کے بعد مسلم لیگ ن کے امیدوار شیخ طارق رشید اور سینیٹر رانا محمود حسن کے ساتھ ساتھ پارٹی کے کئی ارکان کو بھی گرفتار کر لیا۔

ڈوگر اور پی ٹی آئی کے کارکنوں کو تھانہ کینٹ جبکہ شیخ طارق اور مسلم لیگ ن کے کارکنوں کو صدر تھانے منتقل کر دیا گیا۔

واضح رہے کہ پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان نے حال ہی میں حکومت کے خلاف ’’جیل بھرو‘‘ (جیل بھرو) تحریک کا اعلان کرتے ہوئے اپنے حامیوں سے کہا کہ وہ تیار رہیں اور ان کی کال کا انتظار کریں۔

سابق وزیراعظم نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کی جانب سے پی ٹی آئی رہنماؤں کو نشانہ بنانے پر شدید احتجاج کرنے کا اعلان کیا اور کہا کہ جب ان کی پارٹی کے رہنماؤں کے ساتھ زیادتی ہو رہی ہے تو ان کی پارٹی بند نہیں ہوگی۔

انہوں نے حکومت پر الزام لگایا کہ وہ اس کے لیڈروں اور کارکنوں کو خوفزدہ کر کے ان کی پارٹی کو کمزور کرنے کی کوشش کر رہی ہے، اور الزام لگایا کہ حکومت انتخابات میں تاخیر کے لیے ان ہتھکنڈوں پر انحصار کرتی ہے۔

انہوں نے اپنی پارٹی کے کارکنوں سے کہا کہ وہ حتمی کال کی تیاری کریں۔

پی ٹی آئی کے سربراہ کے اعلان کے بعد، مخلوط حکومت نے سابق وزیر اعظم پر تنقید کی اور ان سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنے خلاف مقدمے میں ضمانت واپس لے کر ایک مثال قائم کریں۔

پنجاب کی صوبائی پارلیمنٹ اور کے پی کی پارلیمنٹ کو جنوری میں وزیر اعظم شہباز شریف کو قومی انتخابات کرانے پر مجبور کرنے کے لیے عمران کی ہدایات کے بعد تحلیل کر دیا گیا تھا۔ آئین کے مطابق پارلیمنٹ تحلیل ہونے کے 90 دن کے اندر انتخابات کا انعقاد ضروری ہے۔

دونوں ریاستی مقننہ کو تحلیل ہوئے تقریباً ایک مہینہ ہو چکا ہے، لیکن ابھی تک الیکشن کی تاریخ کا اعلان نہیں کیا گیا ہے کیونکہ ای سی پی ابھی تک اس معاملے پر بات کر رہا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
اسلام آباد و لورالائی کے ماحولیاتی نمونوں میں پولیو وائرس کی تصدیق عید پر مریضوں و لواحقین کو ناشتہ و کھانا دینگے: لاہور جنرل اسپتال انتظامیہ مویشی منڈی میں بشتر جانور بک گئے فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ، بجلی قیمت میں 3 روپے 41 پیسے اضافے کی درخواست سونے کی فی تولہ قیمت میں 200 روپے کی کمی کراچی میں عید الاضحی سے قبل سبزیوں کی قیمتوں میں اضافہ مقامی طور پر تیار بچوں کے دودھ پر 18 فیصد سیلز ٹیکس لگانے کی تجویز پر غور کون زیادہ گوشت کھاتا ہے! مرد یا خواتین؟ پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں اس مرتبہ کاروباری ہفتہ ریکارڈ ساز رہا ٹی ڈیپ کی زیر سرپرستی 11 پاکستانی کمپنیوں کے وفد کا دورہ ہیوسٹن، تجارتی معاملات پر گفتگو نیپرا نے بجلی کے بنیادی ٹیرف میں 5.72 روپے فی یونٹ اضافے کی منظوری دے دی پیٹرول کی قیمت میں بڑی کمی کردی گئی پاکستان شیئر بازار نے 77 ہزار کی حد عبور کرلی کریڈٹ یا ڈیبٹ کارڈ قبول نہ کرنیوالے دکاندار کا کاروبار سِیل ہو گا: ایف بی آر ڈیفالٹ سے دوچار کمپنیوں کیلئے ریگولرائزیشن اسکیم متعارف