افواہوں کا بھنور پٹرول کی قلت کو ہوا دیتا ہے۔

37

اسلام آباد:

تیل کی قلت ایک بار پھر ملک کو مار رہی ہے، جس کی بڑی وجہ انوینٹریوں کے ذخیرے اور کچھ کمپنیوں کی طرف سے سامان درآمد کرنے میں ناکامی ہے، کیونکہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں آسنن اضافے کے بارے میں افواہیں گردش کر رہی ہیں۔

پچھلے مہینے، حکومت نے تیل کی قیمتوں پر نظرثانی سے کچھ دن پہلے، پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 35 روپے فی لیٹر اضافہ کیا تھا۔

کچھ پٹرول پمپوں نے اپنے صارفین کو سپلائی روک دی ہے کیونکہ وہ اپنا سامان ذخیرہ کرنے اور بیچنے کا ارادہ رکھتے ہیں کیونکہ آنے والے دنوں میں قیمتیں بڑھ سکتی ہیں۔

تاہم، کچھ کمپنیاں جو لیٹر آف کریڈٹ (LCs) کھولنے میں دشواریوں کی وجہ سے پیٹرولیم مصنوعات درآمد کرنے سے قاصر تھیں، ریٹیل آؤٹ لیٹس کو ایندھن دینے سے قاصر تھیں، جس کی وجہ سے مصنوعات کی قلت پیدا ہوگئی۔

ذرائع نے ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا کہ ملک میں پٹرول اور ڈیزل کی اتنی ذخائر موجود ہیں جو اگلے 20 دنوں کی طلب کو پورا کر سکیں۔

انہوں نے کہا کہ فی الحال، صرف ٹاپ چھ کمپنیوں – پاکستان نیشنل آئل، ٹوٹل، گوہ، شیل اور اے پی ایل – کے پاس پیٹرولیم مصنوعات کا ذخیرہ ہے۔ ملک میں کل 9,800 پیٹرول پمپ ہیں، جن میں سے 6 کے پاس 6000 ریٹیل آؤٹ لیٹس کا نیٹ ورک ہے۔

باقی تیل کے تقسیم کار باقی 3,800 ریٹیل آؤٹ لیٹس کی فراہمی کے لیے ایل سی کھولنے میں دشواریوں کی وجہ سے پیٹرولیم مصنوعات درآمد کرنے سے قاصر تھے۔

موجودہ بحران آئی ایم ایف کے معاہدے سے طول پکڑ گیا کیونکہ پیٹرولیم مصنوعات کی درآمد کے لیے مارکیٹ میں ڈالر نہیں تھا، صنعت کے ذرائع نے بتایا کہ 3,800 خوردہ فروشوں پر بوجھ چھ خوردہ فروشوں پر ڈالا گیا ہے۔

آئل کمپنیز ایڈوائزری کونسل (او سی اے سی) نے پہلے ہی نیشنل بینک آف پاکستان کے گورنر اور آئل سیکٹر کو خبردار کیا تھا کہ پیٹرولیم مصنوعات کی درآمد کے لیے ایل سی کھولنے کے معاملے کی وجہ سے ملک میں تیل کا بحران پیدا ہو رہا ہے۔

اس کے علاوہ ایل سی ایشوز کی وجہ سے پی ایس او کی کچھ شپمنٹس منسوخ کر دی گئی ہیں۔

تیل کے ڈیلرز نے دعویٰ کیا کہ انہیں مصنوعات کی قلت کا سامنا ہے کیونکہ تیل تقسیم کرنے والے ایندھن کی فراہمی نہیں کر رہے تھے۔

آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی (اوگرا) کے ترجمان نے بتایا کہ اسٹیشن پر پیٹرول اور ڈیزل کی دستیابی کو جانچنے کے لیے ایک ٹیم روانہ کردی گئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ مصنوعات کی سپلائی کی جانچ کے لیے ٹیمیں آئل کمپنی کے ڈپو میں بھی بھیجی گئی ہیں، یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ ملک میں پٹرول اور ڈیزل کا وافر ذخیرہ موجود ہے۔

ایک اور اہلکار نے کہا کہ ریگولیٹر نے آئل مارکیٹنگ فرموں کو خط لکھا ہے کہ وہ مصنوعات کی ذخیرہ اندوزی میں ملوث آئل ڈیلروں کے خلاف کارروائی کریں۔

ذرائع نے بتایا کہ تیل کے شعبے نے ایک اجلاس منعقد کیا، جس کی صدارت وزیر مملکت برائے تیل مصدق ملک نے کی۔

تیل کے ذخائر کی دستیابی کا جائزہ لیتے ہوئے ہمیں بتایا گیا کہ ملک میں تیل کی کوئی کمی نہیں ہے۔

آئل کمپنی کے نمائندوں کو پیٹرولیم مصنوعات کی ذخیرہ اندوزی میں ملوث آئل ڈیلرز کے خلاف کارروائی کی ہدایت کی گئی ہے۔ ریگولیٹرز نے اس مقصد کے لیے ریاستی حکومتوں کو بھی لکھا تھا۔

رابطہ کرنے پر وزیر تیل نے کوئی جواب نہیں دیا۔

مخلوط حکومت کے قیام کے بعد سے تیل کے شعبے کی کارکردگی سوالیہ نشان ہے۔ عوام کی زندگی اجیرن کرنے والے گیس کے بحران پر بھی قابو نہیں پایا جا سکا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ ایسا لگتا ہے کہ کوئی گورننس نہیں ہے کیونکہ آئل سیکٹر آئل ڈیلرز کے مافیا کو سنبھالنے میں ناکام ہے جو تیل اور ڈیزل کی مصنوعی قلت پیدا کرکے صارفین کو لوٹ رہے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایکسپلوزیو ڈویژن، جو کہ آئل سیکٹر کے کنٹرول میں ہے، تیل ڈیلروں کے لائسنس منسوخ کرنے کا اختیار رکھتا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ انہوں نے اس طاقت کو کبھی بھی آئل ڈیلر مافیا کے خلاف کارروائی کے لیے استعمال نہیں کیا۔

ماہرین نے کہا کہ تیل کے تقسیم کار بھی تیل کی سپلائی میں کمی کرکے تیل ڈیلرز کے خلاف کارروائی کر سکتے ہیں، لیکن وہ بھی ایسا کرنے سے گریزاں تھے۔

انہوں نے مزید کہا کہ کارروائی کرنے کے بجائے وفاقی حکومت ریاستی حکومتوں پر تیل ڈیلرز کے خلاف کارروائی کا الزام لگا رہی ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
سونے کی قیمت میں آج کتنے ہزار کا اضافہ ہوا؟ اس وائرل انفیکشن کی علامات کیا ہیں؟ سونے کی فی تولہ قیمت 1200 روپے کم ہوگئی بلنگ میں بے ضابطگیاں، کے الیکٹرک و ڈسکوز کو انکوائری رپورٹ کی سفارشات پر عملدرآمد کا حکم ڈالر 282 روپے 30 پیسے کا ہو گیا برطانوی ایچ آئی وی ویکسین کی آزمائش کے حوصلہ افزا نتائج آئی ایم ایف کے ساتھ نئے قرض پروگرام کیلئے وزارتِ خزانہ کی ورکنگ نئی حکومت کے ساتھ پالیسیز پر کام کرنے کے منتظر ہیں: ڈائریکٹر آئی ایم ایف پاکستان نئے آئی ایم ایف پروگرام میں 6 ارب ڈالر قرضے کی درخواست کرے گا، بلومبرگ نگراں حکومت کی جانب سے لیے گئے مقامی قرضوں کی تفصیلات جاری خیبر پختونخوا کا آئندہ 4 ماہ کا بجٹ تیار وفاقی کابینہ نے رمضان ریلیف پیکج کی منظوری دیدی سونے کی فی تولہ قیمت 2 لاکھ 15 ہزار کی سطح پر مستحکم پاکستان نے رواں مالی سال کے پہلے 6 ماہ میں 7.3 ارب ڈالر کی ادائیگیاں کیں،اسٹیٹ بینک آئی ایم ایف کے 26 میں سے 25 اہداف پر عملدرآمد مکمل