پولیس نے الٰہی کی رہائش گاہ کو دوبارہ گھیرے میں لے لیا۔

29

گجرات:

پنجاب پولیس نے گجرات میں سابق وزیر اعلیٰ پنجاب اور پاکستان مسلم لیگ قائد (پی ایم ایل کیو) کے رہنما چوہدری پرویز الٰہی کے گھر کا ایک بار پھر محاصرہ کیا، تاہم وہ بغیر گرفتاری کے واپس لوٹ گئے۔

تفصیلات کے مطابق، ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر (ڈی پی او) کی قیادت میں پولیس کی ایک مضبوط نفری پرویز الٰہی کی رہائش گاہ کنجاہ ہاؤس کے باہر جمع ہو گئی ہے۔

دستے میں دس سے زائد تھانوں کی پولیس اور ایلیٹ فورس کے اہلکار شامل تھے۔

ذرائع کے مطابق مونس الٰہی ملک سے باہر تھے، ان کی رہائش گاہ پر ایک گیٹ کیپر اور ایک ہاؤس کیپر تھا جب کہ الٰہی کے خاندان کے افراد دور تھے۔

مونس الٰہی نے ٹوئٹر پر اپنے گھر کے باہر پولیس کی بھاری نفری کی ویڈیو شیئر کی۔ انہوں نے لکھا کہ پولیس نے بغیر وارنٹ کے گھر کی تلاشی لی۔

مونس الٰہی نے مزید کہا کہ وہ سمجھتے ہیں کہ ہم اپنی رہائش گاہ پر چھاپہ مار کر عمران خان کو چھوڑ رہے ہیں۔

یہاں یہ بتانا مناسب ہے کہ پانچ روز قبل ان کے گھر کا محاصرہ کرنے کے بعد ایک ہفتے میں یہ دوسرا چھاپہ تھا۔

پرویز مشرف نے پارٹی رہنماؤں کے اغوا پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب کے رہنما کو سندھ سے اغوا کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے انسپکٹر جنرل (آئی جی) سندھ اور انتظامیہ کو متنبہ کیا کہ اس طرح کے اقدامات سے ملک مزید تقسیم ہوگا اور بین الریاستی نفرت کو جنم دے گا۔

انہوں نے وزیراعلیٰ سندھ سے لاقانونیت سے ہوشیار رہنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ مجھے یقین ہے کہ وزیراعلیٰ سندھ صوبوں میں بدامنی پھیلانے والی تحریک کو روکیں گے۔

صوبائی سیکرٹری پنجاب

پولیس نے پنجاب قانون ساز اسمبلی کے سربراہ محمد خان بھٹی کی سرکاری رہائش گاہ پر بھی چھاپہ مارا اور اندر جانے کا دروازہ توڑ دیا۔

ذرائع کے مطابق پولیس نے ملازمین پر تشدد کیا اور خواتین اور بچوں کو ہراساں کیا۔

پولیس نے محمد خان بھٹی کے ملازم نبیل کو حراست میں لے لیا اور اس کے گھر سے سی سی ٹی وی ویڈیو کا سامان بھی قبضے میں لے لیا۔

الٰہی نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ محمد خان بھٹی لاپتہ ہو سکتے ہیں کیونکہ ان کے قانونی مشیر عامر سعید ران ابھی تک لاپتہ ہیں۔

بھٹی کو سندھ کے ضلع مٹیاری سے گرفتار کیا گیا۔

سابق چیف سیکریٹری کو حفاظتی ضمانت کے لیے سندھ ہائی کورٹ میں پیشی کے دوران گرفتار کیا گیا۔ بھٹی کو سندھ پولیس نے حیدرآباد کے سینئر پولیس چیف کی نگرانی میں حراست میں لیا تھا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین