توشہ خانہ کیس میں پی ٹی آئی نے خواجہ حارث کی خدمات حاصل کر لیں۔

2

اسلام آباد:

سابق وزیراعظم عمران خان نے توشہ خانہ کے معاملے پر خواجہ حارث سے منگنی کرلی۔

اضافی سیشن کیس کی سماعت کے دوران، جج ظفر اقبال نے پاکستان الیکشن کمیشن (ای سی پی) کے وکیل کی جانب سے عمران کے وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے پاکستان کی تیلیکو انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ کیا۔ مجرمانہ کارروائیوں میں. منگل کو توشاکانہ واقعہ میں۔

ایسے میں پی ٹی آئی نے حارث کی خدمات سے رجوع کرلیا۔ وہ پہلے ہی وکالت نامے پر دستخط کر چکے ہیں لیکن انہیں منگل کو عدالت میں پیش ہونے کے حوالے سے کوئی ہدایات نہیں دی گئی ہیں۔

اس معاملے میں عمران کی جانب سے علی ظفر کے محافظ پہلے بھی پیش ہوئے تھے۔ انہوں نے ای سی پی کے سامنے دلائل بھی دیے۔ حارث کو اب پہلے مقدمے میں سابق وزیر اعظم کے دفاع کے لیے رکھا گیا ہے۔ حارث پہلے ہی اس معاملے سے متعلق قانونی ٹیم کے ارکان کے اجلاس میں شرکت کر چکے ہیں۔

تاہم، پی ٹی آئی کے ایک سینئر وکیل کا خیال ہے کہ پی ٹی آئی اس مقدمے کی سماعت کو جب تک ہو سکے جاری رکھنا چاہتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس طرح کے سیاسی مقدمات نہ صرف قانونی بحثوں کا تعین کرتے ہیں بلکہ مناسب حکمت عملی بھی طے کرتے ہیں۔

لیکن اس نے دلیل دی کہ عمران پر ابھی بھی ایک درست مقدمہ ہے اور یہاں تک کہ ابتدائی مراحل میں سنگین دائرہ اختیار کے مسائل بھی اٹھائے جا سکتے ہیں۔

توشہ خانہ کیس کی سماعت کے حوالے سے پی ٹی آئی کے وکلا نے منگل کو کہا کہ وہ عمران کی جانب سے طبی وجوہات اور دیگر استثنیٰ کی بنا پر درخواست دائر کریں گے۔

عمران اب لاہور میں مقیم ہیں لیکن نااہلی کی تلوار داؤ پر لگی ہوئی ہے۔

فریقین مقدمے کو طول دینے کی کوشش کر سکتے ہیں لیکن سیاہ بادل اب بھی خطرہ ہیں اور عمران کی قسمت کا انحصار اس کیس میں عدالتی کارروائی کے نتائج پر ہے۔

اس سے قبل، سابق وزیر اعظم نے حارث سے قومی احتساب آرڈیننس (NAO) میں حالیہ تبدیلیوں کو سپریم کورٹ (SC) میں چیلنج کرنے کے لیے لابنگ کی تھی۔

حارث گزشتہ 20 سال سے شریف خاندان کی نمائندگی کر رہے ہیں۔ ان کے والد خواجہ سلطان 2000 کے طیارہ ہائی جیکنگ میں سابق وزیر اعظم اور پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل-این) کے سربراہ نواز شریف کے وکیل تھے۔

اس معاملے میں حارث نے اپنے والد کی مدد کی۔ بعد ازاں 2008 میں پاکستان واپس آنے کے بعد وہ برادرم شریف کے وکیل بن گئے۔ حارث نے نواز کو ہائی جیکنگ کیس میں اپنی سزا کو چیلنج کرنے کا معاہدہ بھی کیا اور سپریم کورٹ میں بری ہونے کا فیصلہ کیا۔

یہ بھی پڑھیں: نواز کے سابق وکیل نے عمران کے مقدمے کا دفاع کر دیا

پنجاب میں مسلم لیگ (ن) کی حکومت کے دوران حارث کو اٹارنی جنرل مقرر کیا گیا تھا تاہم دو سال بعد استعفیٰ دے دیا گیا تھا۔ مسلم لیگ ن کے دور حکومت میں بھی حارث نو سگنل کوریڈور پراجیکٹ اور اورنج لائن ٹرین منصوبے سے متعلق واقعات میں ملوث تھا۔

پاناما کیس کی سماعت کے دوران شریف خاندان نے ابتدائی طور پر حارث کو اپنی قانونی ٹیم میں شامل نہیں کیا۔ حارث اس وقت ملوث تھا جب 26 اپریل 2017 کے سپریم کورٹ کے اکثریتی فیصلے نے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) تشکیل دی تھی۔

جب اس وقت کی جے آئی ٹی نے سپریم کورٹ کے عمل درآمد بینچ کے سامنے رپورٹ پیش کی تو حارث نے ٹیم کے جمع کردہ مواد پر سوال اٹھایا۔ بعد ازاں نواز کو آئین کے آرٹیکل 62(1)(f) کے تحت بینچ سے نااہل قرار دے دیا گیا۔

نواز شریف کو نااہل قرار دینے کے بعد بنچ نے شریف خاندان کے خلاف انکوائری دائر کرنے کے لیے معاملہ قومی احتساب بورڈ (نیب) کو بھیج دیا۔ مقدمے کی سماعت کے دوران حارث نواز کی جانب سے احتساب عدالت میں پیش ہوئے۔

جب نواز اور ان کی بیٹی مریم نواز کو ایون فیلڈ کیس میں سزا سنائی گئی تو حارث اسلام آباد ہائی کورٹ (IHC) میں احتساب عدالت کے فیصلے کو چیلنج کر رہے تھے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
ملک سے اضافی چینی کی برآمد کیلئے راہ ہموار ہونے لگی پی ایس ایکس میں مسلسل دوسرے روز کاروبار کا منفی رجحان نان فائلرز کی موبائل سمز بلاک کرنے کے مثبت اثرات، 7167 نے ٹیکس گوشوارے جمع کرا دیے، ذرائع خسرہ کی بڑھتی وبا، محکمہ صحت پنجاب نے الرٹ جاری کردیا خسرے سے 6 بچوں کی اموات، ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی ٹیم کا متاثرہ علاقے کا دورہ ایل پی جی کی قیمت میں نمایاں کمی سونا آج 2400 روپے مہنگا ہو کر فی تولہ کتنے کا ہو گیا؟ ملک میں مہنگائی میں کمی ہو رہی ہے، رپورٹ وزارت خزانہ ملک میں 3 ہزار ڈبہ پیٹرول پمپ اسٹیشن چل رہے ہیں، چیئرمین اوگرا مرغی کا گوشت مہنگا ہوکر 431 روپے کلو ہو گیا شوگر ایڈوائزری بورڈ کا اہم اجلاس کل لاہور میں طلب پلان کوآرڈینیشن کمیٹی کا اجلاس 31 مئی کو طلب کبیر والا میں خسرہ سے 6 بچے جاں بحق ہوئے: وزیر صحت پنجاب سونے کی فی تولہ قیمت 500 روپے کم ہوگئی تھیلیسمیا و ہیموفیلیا کے پھیلاؤ کی ذمے دار ہماری اپنی غلطیاں ہیں: وزیرِ صحت سندھ