ناقص قومی اسمبلی میں سانحہ پشاور پر بحث جاری ہے۔

2

اسلام آباد:

سانحہ پشاور مسلسل تیسرے روز جمعہ کی غیر تسلی بخش پارلیمانی کارروائی پر حاوی رہا، جس میں صرف 28 ارکان پارلیمنٹ موجود تھے۔

قومی سانحہ پر بحث کے لیے ضروری کورم نہ ہونے کے باوجود سپیکر راجہ پرویز اشرف کی زیر صدارت اجلاس جاری رہا۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی رکن ناز بلوچ نے سانحہ کے بارے میں گفتگو میں حصہ لیتے ہوئے واقعے کی شدید مذمت کی۔

تاہم، اس نے موقع کا استعمال کرتے ہوئے پاکستان کی تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما پر "پورے ملک میں افراتفری پھیلانے” اور 10 ماہ تک پارلیمنٹ میں پیش نہ ہونے کا الزام لگایا۔ انہوں نے بتایا کہ استعفیٰ منظور ہونے پر انہوں نے کس طرح "رونا” شروع کیا۔

جمیعت علمائے اسلام (جے یو آئی-ف) کے رکن صلاح الدین ایوبی نے کہا کہ بحث میں حصہ لیتے ہوئے پاکستان کی دہشت گردی کی باقیات کسی اور پر ڈالنا ناانصافی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں اتحاد اور اتفاق کی ضرورت ہے۔ پاکستان اور افغانستان میں امن ایک دوسرے سے جڑا ہوا ہے۔

اجلاس کے دوران قومی اسمبلی نے پاکستان سیز بل 2021 کی بھی منظوری دی۔

آسیہ عظیم نے ضلعی عدالتوں اور اسلام آباد ہائی کورٹ (IHC) میں سیکیورٹی بڑھانے کا معاملہ اٹھایا۔

انہوں نے کہا کہ فیملی کورٹس ہیں اور ہم ایک اور حادثے کے متحمل نہیں ہو سکتے۔
اس حوالے سے چیئرمین نے وزیر پارلیمانی امور مرتضیٰ جاوید عباسی کو معاملے کی تحقیقات کا حکم جاری کیا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین