چین کا کہنا ہے کہ امریکہ نے اس کی فضائی حدود میں اونچائی والے غبارے کو اڑایا

40

بیجنگ،:

چین نے پیر کو کہا کہ امریکی اونچائی والے غبارے 2022 کے اوائل سے لے کر اب تک 10 بار چینی فضائی حدود میں بغیر لائسنس کے پرواز کر چکے ہیں، جس سے سفارتی تصادم شروع ہو گیا جب امریکی افواج نے چینی جاسوس غبارے کو مار گرانے کا دعویٰ کیا تھا۔

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان وانگ وین بِن نے بیجنگ میں ایک باقاعدہ پریس کانفرنس میں کہا کہ "گزشتہ سال سے، 10 سے زائد امریکی اونچائی والے غبارے غیر قانونی طور پر چینی فضائی حدود میں متعلقہ چینی محکموں کی منظوری کے بغیر اڑائے جا چکے ہیں۔”

وانگ نے خاص طور پر یہ نہیں بتایا کہ یہ غبارے فوجی یا جاسوسی کے مقاصد کے لیے تھے اور نہ ہی اس نے مزید تفصیلات فراہم کیں۔

یہ پوچھے جانے پر کہ چین نے اس طرح کی فضائی دراندازی پر کیا ردعمل ظاہر کیا، وانگ نے کہا کہ جواب "ذمہ دارانہ اور پیشہ ورانہ” تھا۔

پینٹاگون نے فوری طور پر تبصرہ کی درخواست کا جواب نہیں دیا۔

چین کا یہ دعویٰ اس وقت سامنے آیا جب امریکہ نے 4 فروری کو جنوبی کیرولائنا کے ساحل سے ایک چینی جاسوس غبارے کو مار گرایا جو کئی دن تک امریکی سرزمین پر بہتی رہی۔

چین کے غبارے کے جواب میں امریکہ نے وزیر خارجہ انتھونی برنکن کا بیجنگ کا دورہ ملتوی کر دیا ہے۔

چین کا کہنا ہے کہ غبارہ ایک سویلین تحقیقی جہاز تھا جو حادثاتی طور پر راستے سے نکل گیا اور اس نے امریکہ پر زیادہ ردعمل کا الزام لگایا۔

وانگ نے کہا، "امریکی فریق کو سب سے پہلے اپنے آپ کو دیکھنا چاہیے، اپنے طریقے بدلنا چاہیے، اور بہتان تراشی نہیں کرنا چاہیے اور نہ ہی محاذ آرائی پر اکسانا چاہیے۔”

حال ہی میں، امریکی فوج نے شمالی امریکہ کے اوپر تین دیگر اڑنے والی اشیاء کو مار گرایا۔

مسٹر وانگ نے کہا کہ انہیں امریکہ کی طرف سے مار گرائے گئے تازہ ترین تین اشیاء کے بارے میں کوئی معلومات نہیں ہیں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین