ایران میں اسلامی انقلاب کی 44ویں سالگرہ منائی گئی۔

59

اسلامی انقلاب کی 44 ویں سالگرہ کے موقع پر ہفتہ کو تہران اور دیگر بڑے شہروں میں ہزاروں کی تعداد میں ایرانیوں نے ریلیاں نکالیں کیونکہ صدر نے کہا کہ کئی مہینوں کے احتجاج کو شکست ہوئی ہے۔

پچھلے دو سالوں سے، 1979 میں شاہ کی مغربی حمایت یافتہ معزولی کو ایرانیوں نے کاروں اور موٹر سائیکلوں میں شہر کے گرد گھومتے ہوئے یاد کیا ہے، جس کی بڑی وجہ COVID-19 پابندیاں ہیں۔

لیکن اس سال، انہوں نے جھنڈے لہرائے اور تہران کی سڑکوں پر چلتے ہوئے، سرد درجہ حرارت کے باوجود دارالحکومت کے سب سے مشہور نشانات آزادی (آزادی) اسکوائر میں جمع ہوئے۔

انہوں نے ‘ڈاؤن ود امریکہ’، ‘ڈاؤن ود اسرائیل’، ‘ڈاؤن ود برطانیہ’ کے نعرے لگائے۔

لوگ ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای، مرحوم بانی اسلامی جمہوریہ آیت اللہ روح اللہ خمینی اور محترم جنرل قاسم سلیمانی کو یاد کرتے ہیں، جو جنوری 2020 میں بغداد کے ہوائی اڈے پر امریکی فضائی حملے میں مارے گئے تھے۔ میں نے ایک تصویر پوسٹ کی۔

انہوں نے پلے کارڈز بھی اٹھا رکھے تھے جن پر "ہم آخر تک کھڑے رہیں گے”، "ایک متحد، مضبوط اور مستحکم ایران” اور "ہم اپنے قائدین کی پیروی کرتے ہیں”۔

سیسل بیلسٹک میزائل اور شہید 136 ڈرون اس چوک کے ارد گرد نمائش کے لیے رکھے گئے تھے جہاں صدر ابراہیم رئیسی نے کہا کہ لوگ انقلاب کے ساتھ اپنی "وفاداری” کی تجدید کے لیے جمع ہوئے تھے۔

انتہائی قدامت پسند صدر نے کہا کہ "یہ وفاداری کا عہد اسلامی جمہوریہ میں اعتماد کے ووٹ سے کہیں زیادہ اہم ہے۔”

رئیسی نے ملک بھر میں ہونے والے مظاہروں پر بھی فتح کا اعلان کیا جو 22 سالہ مہسا امینی کی حراست میں موت کے بعد ہوا جب اسے ایران کے خواتین کے لباس کوڈ کی خلاف ورزی کرنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔

حکام نے بتایا کہ احتجاجی مظاہروں کے دوران درجنوں سیکورٹی اہلکاروں سمیت سینکڑوں افراد ہلاک اور ہزاروں کو گرفتار کیا گیا، جنہیں عام طور پر "فساد” کہا جاتا ہے۔

عدالتی حکام نے احتجاج کے سلسلے میں 18 افراد کو سزائے موت سنائی۔ اے ایف پی مزید سرکاری اعلانات کی بنیاد پر جمع۔

چار کو پھانسی دے دی گئی، جس سے بین الاقوامی غم و غصہ پھیل گیا۔

ہفتہ کی تقریر میں، رئیسی نے ان الزامات کو دہرایا کہ مظاہروں کو مغرب نے اکسایا اور ایندھن دیا۔

انہوں نے کہا کہ دیکھو گزشتہ سال ان کے دشمنوں نے کیا کیا اور کیا سازشیں کیں لیکن جس ملک نے تاریخ رقم کی، ایران نے اپنے دشمنوں کے شیطانی ہاتھ کو پہچانا، اسٹیج پر چمکا اور انہیں شکست دی۔

رئیسی نے کہا، "دشمن کا مسئلہ نہ خواتین، نہ زندگی، نہ آزادی، نہ انسانی حقوق، اور نہ جوہری[پروگرام]ہے، بلکہ ایرانی عوام کو ان کی آزادی، آزادی اور پرامن زندگی سے محروم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔”

16 ستمبر کو کرد نژاد ایرانی خاتون امینی کی موت کے بعد شروع ہونے والے احتجاج کے بنیادی نعرے "عورت، زندگی، آزادی” تھے۔

سرکاری ٹیلی ویژن نے کہا کہ اسلامی انقلاب کی 44 ویں سالگرہ کی تقریبات ملک بھر کے 1400 شہروں اور قصبوں میں منعقد کی گئیں، جن میں اصفہان، مشہد، شیراز اور تبریز میں عوامی ریلیوں کی فوٹیج دکھائی گئیں۔

یہ جشن اس دن کو منایا جاتا ہے جب شیعہ عالم خمینی کے جلاوطنی سے واپس آنے کے دس دن بعد شاہ کی حکومت گر گئی۔

شاہ محمد رضا پہلوی اپنی حکمرانی کے خلاف مہینوں کے احتجاج کے بعد جنوری 1979 میں پہلے ہی ایران سے فرار ہو گئے تھے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
اسلام آباد و لورالائی کے ماحولیاتی نمونوں میں پولیو وائرس کی تصدیق عید پر مریضوں و لواحقین کو ناشتہ و کھانا دینگے: لاہور جنرل اسپتال انتظامیہ مویشی منڈی میں بشتر جانور بک گئے فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ، بجلی قیمت میں 3 روپے 41 پیسے اضافے کی درخواست سونے کی فی تولہ قیمت میں 200 روپے کی کمی کراچی میں عید الاضحی سے قبل سبزیوں کی قیمتوں میں اضافہ مقامی طور پر تیار بچوں کے دودھ پر 18 فیصد سیلز ٹیکس لگانے کی تجویز پر غور کون زیادہ گوشت کھاتا ہے! مرد یا خواتین؟ پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں اس مرتبہ کاروباری ہفتہ ریکارڈ ساز رہا ٹی ڈیپ کی زیر سرپرستی 11 پاکستانی کمپنیوں کے وفد کا دورہ ہیوسٹن، تجارتی معاملات پر گفتگو نیپرا نے بجلی کے بنیادی ٹیرف میں 5.72 روپے فی یونٹ اضافے کی منظوری دے دی پیٹرول کی قیمت میں بڑی کمی کردی گئی پاکستان شیئر بازار نے 77 ہزار کی حد عبور کرلی کریڈٹ یا ڈیبٹ کارڈ قبول نہ کرنیوالے دکاندار کا کاروبار سِیل ہو گا: ایف بی آر ڈیفالٹ سے دوچار کمپنیوں کیلئے ریگولرائزیشن اسکیم متعارف