ترکی میں زلزلے کے بعد عالمی رہنماؤں نے اظہار یکجہتی کیا۔

17

انقرہ:

ترکی میں پیر کی صبح آنے والے زلزلے کے تباہ کن سلسلے کے بعد دنیا بھر کے عالمی رہنماؤں کی جانب سے حمایت کے پیغامات موصول ہو رہے ہیں جس نے جنوبی اور جنوب مشرقی ترکی میں بڑے پیمانے پر نقصان پہنچایا اور کم از کم 1,540 افراد ہلاک ہوئے۔

"میں آج صبح ترکی اور شام کے کچھ حصوں میں آنے والے تباہ کن زلزلے کے بارے میں سن کر بہت غمزدہ ہوں۔ میرا دل ان بہت سے خاندانوں کے ساتھ ہے جنہوں نے اپنی جانیں گنوائیں اور میں زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کرتا ہوں۔” یورپی کونسل کے صدر چارلس مشیل نے کہا۔ ٹویٹر

انہوں نے مزید کہا کہ یورپی یونین آپ کے ساتھ مکمل یکجہتی میں ہے۔

یورپی یونین کمیشن کی صدر ارسولا وان ڈیر لیین نے کہا کہ یورپی یونین "ترکی اور شام کے لوگوں کے ساتھ مکمل یکجہتی میں ہے”۔

انہوں نے ٹویٹر پر کہا، "یورپی امداد شروع ہو چکی ہے اور ہم جتنی ہو سکے مدد جاری رکھنے کے لیے تیار ہیں۔”

یورپی پارلیمنٹ کی صدر روبرٹا میزولا نے کہا کہ وہ "خوفناک زلزلے کے بعد شدید غمزدہ” ہیں۔

انہوں نے ٹویٹر پر لکھا، "میرے خیال میں مرنے والے، پھنسے ہوئے، زخمیوں اور تمام ریسکیورز جان بچانے کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔”

انہوں نے مزید کہا کہ یورپ مشکل کی اس گھڑی میں ترکی اور شامی عوام کے ساتھ کھڑا ہے۔

نیٹو، ڈبلیو ای ایف

نیٹو کے سکریٹری جینز اسٹولٹن برگ نے ترکی کے ساتھ مکمل یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے ٹویٹر پر کہا:

نیٹو الائیڈ لینڈ کمانڈ (LANDCOM) نے بھی زلزلے کے متاثرین سے تعزیت کا اظہار کیا۔

"ترکی نہ صرف نیٹو کا اتحادی ہے بلکہ لینڈ کام کا گھر بھی ہے۔” کمانڈر ولیمز نے ٹویٹ کیا۔

ورلڈ اکنامک فورم کے صدر بورج برینڈے نے کہا: "میں ترکی اور شام کے لوگوں سے ہولناک زلزلے کے حوالے سے اپنی گہری تعزیت کا اظہار کرتا ہوں۔”

انہوں نے ٹویٹر پر کہا، "میں متاثرین کے خاندانوں اور پہلے جواب دہندگان کے درد کے بارے میں سوچ رہا ہوں جو زلزلے میں پھنسے لوگوں کو بچانے کے لیے محنت اور حوصلے سے کام کر رہے ہیں۔”

صدر ایمانوئل میکرون نے کہا کہ فرانس ہنگامی امداد فراہم کرنے کے لیے تیار ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے خیالات سوگوار خاندان کے ساتھ ہیں۔

فرانسیسی وزیر خارجہ کیتھرین کولونا نے کہا کہ "اس خوفناک زلزلے کے بعد ترک عوام کے ساتھ میری گہری تعزیت ہے۔”

انہوں نے ٹویٹر پر کہا کہ "ہم آپ کے ساتھ کھڑے ہیں اور تمام متاثرین اور ان کے اہل خانہ تک اپنے خیالات بھیجتے ہیں۔ یقینا فرانس مدد کرے گا۔”

ٹیڈروس ٹیڈروس نے کہا کہ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی "ہنگامی طبی ٹیموں کے نیٹ ورک کو فعال کیا جا رہا ہے تاکہ زخمیوں اور ترکی اور شام میں آنے والے زلزلوں سے متاثر ہونے والے سب سے زیادہ کمزور لوگوں کو صحت کی ضروری دیکھ بھال فراہم کی جا سکے۔” ڈائریکٹر جنرل گیبریئس نے کہا۔

"ہمارے خیالات ان خاندانوں کے ساتھ ہیں جنہوں نے اپنے پیاروں کو کھو دیا ،” گیبریئس نے ٹویٹ کیا۔

بین الاقوامی لیبر آرگنائزیشن کے ڈائریکٹر جنرل گلبرٹ ایف آئی نے کہا، "ہمیں ترکی میں زلزلے کے نتیجے میں ہونے والے جانی نقصان اور زخمیوں پر بہت دکھ ہوا ہے۔”

انٹرنیشنل فیڈریشن آف ریڈ کراس اینڈ ریڈ کریسنٹ سوسائٹیز (IFRC) کے سیکرٹری جنرل، جگن چاپاگین نے کہا کہ IFRC نے ترکی میں آنے والے زلزلے کے جواب میں ہلال احمر اور شامی ہلال احمر سوسائٹیز دونوں کے میدان میں اپنے نیٹ ورک کو بڑھا دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ فنڈ فراہم کر رہے ہیں۔ شام جاری ہے۔

"(ڈیزاسٹر رسپانس ایمرجنسی فنڈ) DREF کے عطیہ دہندگان کا شکریہ جو ہر روز ہمارے کام کی حمایت کرتے ہیں۔ اس سے ہمیں آفت کے وقت فوری نقد رقم ملے گی،” چاپاگین نے ٹویٹ کیا۔ نیچے۔

اٹلی، بیلجیم، یوکرین، روس

اٹلی کے وزیر خارجہ انتونیو تگجانی نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ انہوں نے اٹلی کی مدد اور مدد فراہم کرنے کے لیے کاوشوگل سے بات کی ہے۔

اپنے پیغام میں پوپ فرانسس نے کہا: ’’میں ترکی اور شام میں آنے والے زلزلوں سے ہونے والی متعدد جانوں کے ضیاع کے بارے میں جان کر بہت افسردہ ہوں۔

فرانسس نے ٹویٹ کیا: "میں مرحوم کو اللہ تعالی کے جوار رحمت میں چھوڑتا ہوں اور جاری امدادی کوششوں میں پیرامیڈیکس کے لئے دعا کرتا ہوں۔

"ہم ترک عوام کے ساتھ یکجہتی کے ساتھ کھڑے ہیں اور مدد فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں،” وزیر خارجہ حاجی ربیب نے کہا کہ بیلجیئم صورتحال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔

"مرنے والوں کی تعداد میں اضافے کی توقع کے ساتھ، ہمارے خیالات پڑوسی ممالک، شمالی شام اور دیگر متاثرہ علاقوں میں ان لوگوں کے ساتھ بھی ہیں، جو بہت سے پناہ گزینوں اور اندرونی طور پر بے گھر افراد کے گھر ہیں۔” ربیب نے ٹویٹ کیا۔

یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے بھی ترکی اور اس کے عوام کی حمایت کا اظہار کیا۔

انہوں نے ٹوئٹر پر کہا کہ "ہم اس مشکل وقت میں ترک عوام کے ساتھ کھڑے ہیں۔ ہم آفت کے اثرات پر قابو پانے کے لیے ضروری مدد فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں۔”

روسی صدر ولامیڈیل پوتن نے ایک بیان میں کہا کہ ماسکو "تمام ضروری مدد فراہم کرنے کے لیے تیار ہے”۔

انقرہ میں روسی سفارت خانے نے تعزیت کا اظہار کیا اور امید ظاہر کی کہ نقصان کم سے کم ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں: شام میں ترکی میں آنے والے زلزلے میں ہلاکتوں کی تعداد 2200 سے تجاوز کر گئی۔

وزیر اعظم میٹیوز موراویکی نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ ترکی اپنی تمام مدد کے لیے "پولینڈ پر بھروسہ کر سکتا ہے”۔

انہوں نے ٹویٹر پر کہا ، "میرے خیالات اور دعائیں متاثرین کے اہل خانہ کے ساتھ ہیں ،” انہوں نے مزید کہا کہ پولینڈ کے فائر بریگیڈ کے اہلکار "ہمیشہ مدد کے لئے تیار ہیں۔”

چین کی وزارت خارجہ نے یہ بھی کہا، "ہم متاثرین کے تئیں اپنی گہری تعزیت اور غمزدہ خاندانوں کے ساتھ دلی تعزیت کا اظہار کرتے ہیں۔

انگلینڈ، جرمنی، سپین، پرتگال

برطانوی وزیر اعظم رشی سنک نے "سب سے پہلے جواب دہندگان کی تعریف کی ہے جو زلزلے میں پھنسے لوگوں کو بچانے کے لیے بہادری سے کام کر رہے ہیں”۔

انہوں نے ٹویٹر پر کہا ، "برطانیہ ہم سے ہر ممکن مدد کرنے کے لئے تیار ہے۔”

سکریٹری خارجہ جیمز کلیورلی نے بھی اس بات کا اعادہ کیا کہ "برطانیہ مدد فراہم کرنے کے لیے تیار ہے”۔

چانسلر اولاف شولز نے کہا کہ جرمنی "مایوسی کے ساتھ” زلزلے کی خبر پر عمل کر رہا ہے۔

Scholz نے ٹویٹر پر کہا ، "مرنے والوں کی تعداد میں اضافہ جاری ہے۔ "جرمنی یقیناً مدد بھیجے گا۔”

جرمن وزیر خارجہ اینالینا بیئربوک نے یہ بھی کہا کہ برلن "راستے میں فوری مدد حاصل کرنے” کے لیے شراکت داروں کے ساتھ رابطہ کر رہا ہے۔

ہسپانوی وزیر اعظم پیڈرو سانچیز نے "تاریخ کے سب سے بڑے زلزلوں میں سے ایک” کے درمیان ترکی اور شام کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزارت داخلہ نے تلاشی مشن کی مدد کے لیے ملٹری ایمرجنسی فورس اور ہنگامی فضائی نقل و حمل شروع کر دی ہے۔

اسپین کی وزارت خارجہ نے ایک ٹویٹ میں کہا: "ترکی، شام، لبنان اور عراق میں آج صبح کے زلزلے کے متاثرین سے تعزیت۔”

پرتگال کی وزارت خارجہ نے ترک عوام اور حکومت کے ساتھ "مکمل یکجہتی” کا اظہار کیا۔

سویڈن، فن لینڈ، یونان، سوئٹزرلینڈ

سویڈن کے وزیر اعظم الف کرسٹرسن نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ "ترکی کے ساتھی اور یورپی یونین کی صدارت کے طور پر، ہم مدد فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں۔”

فن لینڈ کی وزیر اعظم سانا مارین نے ٹویٹ کیا، "ہم متاثرین اور مصائب کے لیے اپنی گہری تعزیت کا اظہار کرتے ہیں،” انہوں نے مزید کہا کہ "اب فوری مدد اور مدد کی ضرورت ہے۔”

یونانی وزیر اعظم Kyriakos Mitsotakis نے کہا کہ ایتھنز "وسائل کو متحرک کر رہا ہے” اور "فوری طور پر” مدد فراہم کرے گا۔

ترک کمیونیکیشن ڈائریکٹوریٹ کے مطابق، یونانی صدور کترینا ساکیرالوپل اور میتسوتاکس نے بھی اردگان کو فون کیا اور زلزلے کی وجہ سے اپنی جانوں سے ہاتھ دھونے والوں سے اظہار تعزیت اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کی خواہش کی۔

سوئس وزیر خارجہ Ignazio Cassis مدد کی پیشکش کرنے والے اہلکاروں میں شامل ہوئے، ایک ٹویٹ میں کہا کہ "سوئٹزرلینڈ ترکی کے ساتھ کھڑا ہے اور انسانی امداد فراہم کرتا ہے۔”

سوئس صدر ایلین بیرسیٹ نے اسی طرح کا پیغام ٹویٹ کرتے ہوئے کہا: "ہمارے خیالات ترکی اور شام کے لوگوں کے ساتھ ہیں جو المناک زلزلے سے متاثر ہوئے ہیں۔”

انہوں نے مزید کہا کہ "سوئٹزرلینڈ ہنگامی امداد فراہم کرنے کے لیے تیار ہے۔”

ہنگری، آسٹریا، بلغاریہ، مالڈووا

ہنگری کے صدر کاتالین نوواک نے بھی "متاثرین کے اہل خانہ سے دلی تعزیت” کا اظہار کیا۔

آسٹریا کی وزارت خارجہ نے ایک ٹویٹ میں کہا، "ہماری یکجہتی اور خیالات اس خوفناک سانحے سے متاثرہ کمیونٹی اور تلاش اور بچاؤ کی کوششوں میں شامل تمام افراد کے ساتھ ہیں۔”

بلغاریہ کی وزارت خارجہ نے دعویٰ کیا کہ "دوست عوام اور ترک حکومت اس مشکل وقت میں بلغاریہ کی مدد پر بھروسہ کر سکتے ہیں۔”

مالدووا کے وزیر خارجہ نیکو پوپیسکو نے ٹویٹر پر کہا: "میرا دل متاثرین کے اہل خانہ کے ساتھ ہے اور میں ان کی جلد صحت یابی کی خواہش کرتا ہوں۔”

ایل سلواڈور، آسٹریلیا، لٹویا، ایسٹونیا، لتھوانیا

ایل سلواڈور کے صدر نائیو بوکیل نے ٹویٹ کیا کہ حکومت "تمام ضروری مدد فراہم کرنے کے لیے تیار ہے”۔

آسٹریلیا کے وزیر خارجہ پینی وونگ نے ترکی اور شام کے لیے "مخلصانہ” تعزیت پیش کرتے ہوئے کہا: ہماری ہمدردیاں متاثرین اور زخمیوں کے اہل خانہ کے ساتھ ہیں۔ "

لٹویا کے وزیر خارجہ ایڈگرس لنکویچ نے سوگوار خاندانوں سے اپنی "گہری تعزیت” کا اظہار کیا اور تمام زخمیوں کی جلد صحت یابی کی خواہش کی۔

اسٹونین اور لتھوانیا کی وزارت خارجہ نے بھی تعزیت کا اظہار کیا۔

سربیا، شمالی مقدونیہ، بوسنیا اور ہرزیگووینا

سربیا کے صدر الیگزینڈر ووچک نے یکجہتی کا پیغام جاری کیا اور زور دیا کہ سربیا تمام ضروری مدد فراہم کرنے کے لیے تیار ہے۔

شمالی مقدونیہ کے صدر سٹیو پینڈالواسکی نے سوگوار خاندانوں اور تمام ترک عوام سے تعزیت کا اظہار کیا۔

بوسنیا اور ہرزیگوینا کے وزیر خارجہ Ermedin Konakovich نے ترکی کو ہر ممکن مدد فراہم کرنے کی پیشکش کی ہے جبکہ سلووینیائی وزیر خارجہ تنجا فاجون نے "گہرے دکھ” کا اظہار کیا اور تمام زخمیوں کی جلد صحت یابی کی خواہش کی۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
فروری کے آخری کاروباری روز مثبت رجحان، انڈیکس 875 پوائنٹس بڑھ گیا وزارت خزانہ نے ماہانہ اکنامک اپ ڈیٹ آؤٹ لک رپورٹ جاری کردی سونے کی قیمت میں آج کتنا اضافہ ہوا؟ وزیراعلیٰ پنجاب مریم نواز کی ہدایت پر میواسپتال کی ایمرجنسی میں نئے اسٹریچر اور بیڈز پہنچ گئے معاشی ماہرین کا پی ٹی آئی کے آئی ایم ایف کو خط پر ردِعمل پی ایم ڈی سی نے عام ڈاکٹروں کو ایستھیٹک میڈیسن کی پریکٹس سے روک دیا سونے کی فی تولہ قیمت میں 1100 روپے کی کمی 100 انڈیکس الیکشن کے بعد بلند ترین سطح پر بند چین نے پاکستان کا 2 ارب ڈالر کا قرض رول اوور کردیا نہار منہ ہلدی کا پانی پینے کے صحت پر 10 حیران کُن فوائد پاکستان میں 8 فروری کو انتہائی متنازع انتخابات کے باعث سیاسی خطرات بلند ہیں، موڈیز حکومت نیپرا کے غلط فیصلوں کا نوٹس لے، صدر کے سی سی آئی افتخار شیخ کاروبار کا ملا جلا دن، 100 انڈیکس میں 86 پوائنٹس کی کمی سونے کی فی تولہ قیمت میں 100 روپے کا اضافہ حکومت نے رواں مالی سال 16 فروری تک بینکنگ شعبے سے کتنا قرض لیا؟