اقوام متحدہ کے حقوق کے نمائندے نے زیر حراست افغان کارکنوں کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

53

کابل:

انسانی حقوق کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی نمائندے نے جمعے کے روز افغانستان کی طالبان حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ دارالحکومت کابل میں سکیورٹی فورسز کے ہاتھوں حراست میں لیے گئے یونیورسٹی کے ایک لیکچرر اور ایک تعلیمی کارکن کو رہا کرے۔

مقامی میڈیا کی رپورٹس کے مطابق اسماعیل مشعل نے طالبان کی جانب سے دسمبر میں طالبات کے یونیورسٹیوں میں داخلہ بند کرنے کے فیصلے کے خلاف لائیو ٹیلی ویژن پر اپنا ڈپلومہ پھاڑ دیا اور کابل کی گلیوں میں تعلیمی کتب اور دیگر دستاویزات پھاڑ کر کتابیں تقسیم کر رہے تھے۔

یہ فیصلہ طالبان حکام نے لڑکیوں کے زیادہ تر ہائی اسکولوں کو بند کرنے اور زیادہ تر خواتین پر خیراتی اداروں کے لیے کام کرنے پر پابندی کے بعد کیا ہے۔

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے رپورٹر رچرڈ بینیٹ نے ٹویٹر پر کہا: "(میں) کل طالبان کے ہاتھوں امن کی تعلیم کے کارکن اور یونیورسٹی کے لیکچرر اسماعیل مشال کی گرفتاری پر فکر مند ہوں۔” انہوں نے ان کی غیر مشروط رہائی کا مطالبہ کیا۔

طالبان کی وزارت اطلاعات میں میڈیا سرویلنس کے سربراہ عبدالحق حماد نے کہا کہ مشال کو سیکیورٹی فورسز نے صحافیوں کی ریلی نکالنے، سڑکوں پر ہجوم پیدا کرنے اور حکومت کے خلاف پروپیگنڈہ کرنے کے بعد گرفتار کیا تھا۔

حماد نے کہا کہ اس نے مشال کو حراست میں لیا اور اسے گرم کرنے سمیت اچھی حالت میں پایا اور اس کے اہل خانہ سے رابطہ کرنے میں کامیاب رہا۔

فی الحال یہ واضح نہیں ہے کہ مشال کو باقاعدہ الزامات یا مزید سزا کا سامنا کرنا پڑے گا۔

بین الاقوامی برادری نے خواتین پر طالبان کی پابندیوں کی مذمت کی ہے اور بعض سفارت کاروں نے کہا ہے کہ غیر ملکی سرمایہ طالبان کی حکومت کو اس وقت تک تسلیم کرنے پر غور نہیں کرے گا جب تک وہ اپنی پالیسیاں تبدیل نہیں کرتی۔

طالبان نے اگست 2021 میں اقتدار پر قبضہ کر لیا، امریکہ کی قیادت میں اقوام متحدہ کی 20 سال کی موجودگی کے بعد افغانستان سے انخلاء مکمل کیا، اور مغربی حمایت یافتہ حکومت کے خاتمے کا باعث بنی۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین