کیا مرسر امینی نے ایران میں انقلاب برپا کیا؟

24

حجاب کو اتارنے کا حکم دینا اتنا ہی مشکل ہے جتنا کہ اسے پہننا لازمی قرار دینا اور اس کی مذمت کی جانی چاہیے۔

22 سالہ ایرانی خاتون مہسا امینی کو "صحیح طریقے سے حجاب” نہ پہننے کی وجہ سے "اخلاقی پولیس” کے ہاتھوں حراست میں لینے کے بعد موت ہو گئی ہے۔ اس کی وجہ سے ایران بھر میں موجودہ حکومت کے خلاف مظاہرے شروع ہو گئے ہیں۔ سڑکوں پر قابض درجنوں افراد کی ویڈیوز سوشل میڈیا پر گردش کر رہی ہیں جب کہ فرنٹ لائن خواتین احتجاج میں سرعام حجاب جلا رہی ہیں اور اپنے بال کاٹ رہی ہیں۔

اگرچہ یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ کسی خاتون کو سر نہ ڈھانپنے پر مارا پیٹا گیا ہو، لیکن اس بار امینی کی موت کی وجہ سے پیدا ہونے والے غم و غصے نے بے مثال پیمانے پر عوامی ردعمل کو جنم دیا ہے۔

مظاہرین کو ریاستی مظالم کا سامنا ہے کیونکہ پولیس آنسو گیس، لاٹھی چارج اور براہ راست گولی چلا کر ہجوم کو منتشر کرنے کی کوشش کرتی ہے، جسے ریاست نے واضح طور پر ان کارروائیوں کو انجام دینے سے انکار کیا ہے۔ مظاہرین موت کے منہ میں ڈٹی ہوئی فسادی پولیس کو ٹال رہے ہیں۔ حکومت پر شدید غصہ دکھایا گیا ہے کیونکہ ایران میں "آمر مردہ باد” اور "انصاف، آزادی اور واجب حجاب کے خلاف” جیسے نعرے لگائے گئے ہیں۔ اس کے خلاف مظاہرے دارالحکومت اور مغربی ایران سے ملک بھر میں پھیل چکے ہیں۔

مغربی اور ہندوستانی میڈیا کی طرف سے یہ بیانیہ فروغ دیا گیا ہے کہ یہ احتجاج "مخالف حجاب” ہیں گمراہ کن ہیں اور احتجاج کے بعد سے کوئی اطلاع نہیں ہے۔ میں حجاب کے خلاف نہیں ہوں بلکہ اسے پہننے کی مجبوری کے خلاف ہوں، جو شہریوں کی اپنی مرضی کے استعمال کی آزادی کی خلاف ورزی ہے۔

ایران میں بڑے پیمانے پر مظاہرے عوامی عدم اطمینان کی نمائندگی کرتے ہیں جو حکومت کی آمرانہ پالیسیوں کی وجہ سے برسوں کے دوران پختہ ہوا ہے۔وہ ایرانی انقلاب کے ساتھ پہلی بار اقتدار میں آیا۔ موجودہ مظاہرے آمریت کی بدبو اور بدبو پھیلانے والے ظالمانہ قوانین سے چھٹکارا پانے کے لیے حکومت یا کم از کم ایک انقلاب کا نچوڑ بھی ہیں۔ آمریت۔ ایرانیوں کی نافرمانی ان کی آزادیوں، آزادیوں اور اپنے حقوق کے ہر قیمت پر استعمال کے تحفظ کے لیے ان کی خواہش کو ظاہر کرتی ہے۔

اس سال کے شروع میں کرناٹک ہائی کورٹ کی جانب سے یونیورسٹیوں میں حجاب پر پابندی کو برقرار رکھنے کے بعد ہندوستان میں بھی حجاب پر تنازعہ دیکھنے میں آیا تھا۔

ایران ہو یا ہندوستان، خواتین کو حجاب پہننے پر مجبور کرنا یا اسے زبردستی ہٹانا بالآخر انفرادی طور پر انتخاب کی آزادی کا معاملہ بن جاتا ہے اور ان معاملات میں ریاستی مداخلت اور مداخلت ہوتی ہے۔حجاب کو اتارنے کا حکم دینا اتنا ہی مشکل ہے جتنا کہ اس کے پہننے کو لازمی قرار دینا۔ مذمت کرنی چاہیے. لیکن ایران میں ہونے والے احتجاج کو صرف حجاب کے حوالے سے نہیں دیکھا جا سکتا۔بلکہ انہیں چاہئے اسے بڑے پیمانے پر آمرانہ قوانین اور شہریوں کے ساتھ وحشیانہ سلوک کے خلاف ایک مقبول مزاحمت کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔

ایرانی عوام حکومت کا مقابلہ کر رہے ہیں اور اس کا تختہ الٹنا چاہتے ہیں۔ یہ ان کی آزادی کو بحال کرنے کے بارے میں ہے۔ ریاست مظاہرین کو دبانے کے لیے اپنی طاقت کا استعمال کر رہی ہے، شہریوں کو مزید مشتعل کر رہی ہے اور صورت حال کو مزید خراب کر رہی ہے۔ یہ احتجاج شہریوں پر ریاستی کنٹرول میں نرمی کا اشارہ بھی دیتا ہے۔ لہٰذا یہ دیکھنا اہم ہو گا کہ آنے والے سالوں میں یہ احتجاج کس حد تک آگے بڑھتے ہیں کیونکہ یہ ہر گزرتے دن کے ساتھ زور پکڑتے رہتے ہیں۔ ایران کا احتجاج انقلاب پر ختم ہو یا نہ ہو لیکن وہ اس کی طرف ایک قدم ضرور ہو سکتا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
فروری کے آخری کاروباری روز مثبت رجحان، انڈیکس 875 پوائنٹس بڑھ گیا وزارت خزانہ نے ماہانہ اکنامک اپ ڈیٹ آؤٹ لک رپورٹ جاری کردی سونے کی قیمت میں آج کتنا اضافہ ہوا؟ وزیراعلیٰ پنجاب مریم نواز کی ہدایت پر میواسپتال کی ایمرجنسی میں نئے اسٹریچر اور بیڈز پہنچ گئے معاشی ماہرین کا پی ٹی آئی کے آئی ایم ایف کو خط پر ردِعمل پی ایم ڈی سی نے عام ڈاکٹروں کو ایستھیٹک میڈیسن کی پریکٹس سے روک دیا سونے کی فی تولہ قیمت میں 1100 روپے کی کمی 100 انڈیکس الیکشن کے بعد بلند ترین سطح پر بند چین نے پاکستان کا 2 ارب ڈالر کا قرض رول اوور کردیا نہار منہ ہلدی کا پانی پینے کے صحت پر 10 حیران کُن فوائد پاکستان میں 8 فروری کو انتہائی متنازع انتخابات کے باعث سیاسی خطرات بلند ہیں، موڈیز حکومت نیپرا کے غلط فیصلوں کا نوٹس لے، صدر کے سی سی آئی افتخار شیخ کاروبار کا ملا جلا دن، 100 انڈیکس میں 86 پوائنٹس کی کمی سونے کی فی تولہ قیمت میں 100 روپے کا اضافہ حکومت نے رواں مالی سال 16 فروری تک بینکنگ شعبے سے کتنا قرض لیا؟