پاکستان میں 42 فیصد سے زیادہ بچے اسٹنٹ کا شکار ہیں۔

47

اسلام آباد:

پائیدار ترقی کے اہداف (SDGs) پر پارلیمانی ٹاسک فورس نے بدھ کو رپورٹ کیا کہ 42 فیصد پاکستانی بچے اسٹنٹ کا شکار ہیں اور 9.4 فیصد سے زیادہ لڑکے اور 9 فیصد لڑکیاں موٹاپے کا شکار ہیں۔

چیئر رومینہ خورشید عالم کی زیر صدارت پارلیمانی ٹاسک فورس کے اجلاس میں ایس ڈی جی کی حمایت یافتہ زیرو ہنگر انیشیٹو پر غور کیا گیا۔

کمیشن کی رکن ڈاکٹر شازیہ صوبیہ اسلم سومرو نے مزید کہا کہ سرکاری اعداد و شمار کی شدید کمی تھی اور پینل کو بتایا کہ تھر میں غذائی عدم تحفظ کے حالیہ پیمانے کا اندازہ لگانے کے لیے کوئی مطالعہ نہیں کیا گیا۔

خالد مگسی نے افسوس کا اظہار کیا کہ لوگ ملک کو درپیش مسائل پر خاطر خواہ توجہ نہیں دے رہے ہیں، شکایت کرتے ہوئے کہ "ہم صرف پارلیمنٹ میں اپنا وقت ضائع کر رہے ہیں”۔

دوسری جانب شاہدہ رحمانی نے نشاندہی کی کہ مہنگائی کا رجحان عام لوگوں کی مشکلات کو بڑھا رہا ہے۔ اس نے بڑے پیمانے پر غذائی قلت پر افسوس کا اظہار کیا اور بچوں کو منشیات کے استعمال سے روکنے کے لیے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

ایک بریفنگ کے دوران، یونیسیف کے حکام نے آبادی کے بڑے حصوں میں بڑھتی ہوئی غذائی قلت کے تشویشناک اعدادوشمار شیئر کیے، جس میں بتایا گیا کہ ملک میں 42 فیصد سے زائد بچے سٹنٹنگ کا شکار ہیں۔

اسی طرح 9.4% لڑکے اور 9% لڑکیاں موٹاپے کا شکار تھیں، اور بالترتیب 20.5% نوجوان لڑکے اور 20.7% نوجوان لڑکیوں کا وزن زیادہ تھا۔

انہوں نے کہا کہ "12.6% نوجوان لڑکے اور 12.1% لڑکیاں ذیابیطس کا شکار ہیں،” انہوں نے مزید کہا کہ فارمولہ عروج پر ہے۔

کمیشن نے رپورٹ کیا کہ 2014 میں بچوں کے فارمولے کی عالمی فروخت 44.8 بلین ڈالر تک پہنچ گئی، جو 2019 تک بڑھ کر 70.6 بلین ڈالر تک پہنچ گئی۔

پاکستان میں 6 سے 23 ماہ کی عمر کے 14.6 فیصد بچوں کو ماں کا دودھ پلایا جاتا ہے، جبکہ عالمی سطح پر یہ شرح 34 فیصد ہے۔

"گندم میں آئرن، زنک اور وٹامنز ہوتے ہیں۔ پنجاب واحد ریاست ہے جہاں تعلیمی اداروں کے ارد گرد سوڈا، انرجی ڈرنکس اور جنک فوڈ پر پابندی ہے۔”

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین