حکومت نے ایندھن ذخیرہ کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن کا منصوبہ بنایا ہے۔

45

اسلام آباد/لاہور:

ملک میں پیدا ہونے والے ایندھن کے بحران کے پیش نظر، وفاقی حکومت ایگزیکٹوز اور قانون نافذ کرنے والے اداروں سے کہے گی کہ وہ ذخیرہ اندوزوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کریں جو آئندہ ہفتے قیمتوں میں اضافے کی توقعات کے درمیان پٹرولیم مصنوعات کی مصنوعی قلت پیدا کر رہے ہیں۔ .

فیڈرل بیورو آف انویسٹی گیشن (ایف آئی اے) نے ملک بھر میں تیل کے ڈیلرز سمیت پیٹرول کا ذخیرہ کرنے والوں کے خلاف کارروائی کے لیے اعلیٰ حکام پر مشتمل ٹیم تشکیل دی۔

ایکسپریس ٹریبیون کے ساتھ ایک انٹرویو میں، ایک سینئر عہدیدار نے دعویٰ کیا کہ ٹیموں کو علاقائی سطح پر منظم کیا گیا تھا اور جو لوگ انہیں جمع کرتے ہیں وہ "بلا امتیاز” اپنے فرائض سرانجام دیں گے۔

حکام گیس اسٹیشنوں کا بھی معائنہ کریں گے اور ان کے مالکان کے خلاف "سخت” قانونی کارروائی کریں گے اگر وہ پٹرول یا ڈیزل کی ذخیرہ اندوزی میں ملوث پائے گئے۔ ایسے پٹرول سٹیشنوں کا لائسنس بھی منسوخ کر دیا جائے گا۔

یاد رہے کہ آئی جی پنجاب نے ریاستی حکومتوں کی ہدایات پر مقامی، سٹی اور ضلعی پولیس سربراہان کو ایسے عناصر کے خلاف کریک ڈاؤن کرنے پر مجبور کیا ہے۔

ادھر آئل مارکیٹنگ فرموں نے آئندہ ہفتے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں متوقع اضافے کے پیش نظر لاہور سمیت پنجاب بھر میں سپلائی روک دی ہے۔

پٹرول دستیاب گیس اسٹیشن صرف تھوڑی مقدار میں پیش کرتے ہیں۔
لاہور کو یومیہ 3-3.2 ملین لیٹر پٹرول، ڈیزل اور ہائی آکٹین ​​ایندھن کی ضرورت ہے لیکن موجودہ بحران کے بعد شہر کو یومیہ سپلائی 1-1.2 ملین لیٹر ہے۔

جس پمپ کو 50,000 لیٹر پٹرول کی ضرورت ہوتی ہے اسے صرف 5,000 لیٹر ہی سپلائی کیا جاتا ہے۔
اس وقت لاہور کے 550 پمپس میں سے صرف 115 پر پیٹرول دستیاب ہے، جو کہ ضروری طلب سے بہت کم ہے۔ اس وجہ سے، کاروں کو ایک وقت میں صرف 2000 روپے سے 3000 روپے میں ایندھن دیا جاتا ہے، جب کہ موٹر سائیکلوں اور رکشوں کی قیمت 500 سے 1000 روپے ہے۔

آئل ڈیلرز ایسوسی ایشن کے سیکرٹری جنرل خواجہ عاطف نے کہا کہ آئل ڈیلرز نے لاکھوں روپے ایڈوانس وصول کرنے کے باوجود سٹیشن کو پٹرول فراہم نہیں کیا۔

انہوں نے کہا کہ پنجاب میں 70 فیصد سے زائد پیٹرول پمپ بند ہیں جبکہ پیٹرول اسٹیشن مالکان کے پاس اپنے عملے کو تنخواہ دینے کے لیے پیسے نہیں ہیں۔

عاطف نے کہا کہ اس نے اوگرا کو متعدد شکایات درج کرائی ہیں، لیکن ریگولیٹر نے ایسی آئل مارکیٹنگ فرموں کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی۔

انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ صارفین کا گیس اسٹیشن کے عملے سے پٹرول کی قلت، سہولیات کو نقصان پہنچانے اور ملازمین کو مارنے پر جھگڑا ہوا۔

انہوں نے کہا کہ تیل ذخیرہ کرنے والی کمپنیاں اگر قیمتیں بڑھیں تو اربوں ڈالر کمائیں گی، لیکن پمپ مالکان کو پٹرول کی قلت کا ذمہ دار ٹھہرایا جاتا ہے۔

ایک پریس کانفرنس میں وزیر مملکت برائے پیٹرولیم مصدق ملک نے دعویٰ کیا کہ پاکستان کے پاس اگلے 21 دنوں کے لیے پٹرول اور اگلے 29 دنوں کے لیے ڈیزل کا ذخیرہ موجود ہے۔

انہوں نے کہا کہ ذخیرہ اندوزی میں سات ملوث پائے جانے کے بعد تقریباً 900 پٹرول پمپوں کا معائنہ کیا گیا اور انہیں سیل کر دیا گیا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
اسلام آباد و لورالائی کے ماحولیاتی نمونوں میں پولیو وائرس کی تصدیق عید پر مریضوں و لواحقین کو ناشتہ و کھانا دینگے: لاہور جنرل اسپتال انتظامیہ مویشی منڈی میں بشتر جانور بک گئے فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ، بجلی قیمت میں 3 روپے 41 پیسے اضافے کی درخواست سونے کی فی تولہ قیمت میں 200 روپے کی کمی کراچی میں عید الاضحی سے قبل سبزیوں کی قیمتوں میں اضافہ مقامی طور پر تیار بچوں کے دودھ پر 18 فیصد سیلز ٹیکس لگانے کی تجویز پر غور کون زیادہ گوشت کھاتا ہے! مرد یا خواتین؟ پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں اس مرتبہ کاروباری ہفتہ ریکارڈ ساز رہا ٹی ڈیپ کی زیر سرپرستی 11 پاکستانی کمپنیوں کے وفد کا دورہ ہیوسٹن، تجارتی معاملات پر گفتگو نیپرا نے بجلی کے بنیادی ٹیرف میں 5.72 روپے فی یونٹ اضافے کی منظوری دے دی پیٹرول کی قیمت میں بڑی کمی کردی گئی پاکستان شیئر بازار نے 77 ہزار کی حد عبور کرلی کریڈٹ یا ڈیبٹ کارڈ قبول نہ کرنیوالے دکاندار کا کاروبار سِیل ہو گا: ایف بی آر ڈیفالٹ سے دوچار کمپنیوں کیلئے ریگولرائزیشن اسکیم متعارف