حکومت نے آئی ایم ایف کو این اے او، ایف آئی اے قوانین میں ترمیم کی یقین دہانی کرادی

3

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی طرف سے مشروط پاکستان کے انسداد بدعنوانی کے فریم ورک کے جائزے میں، حکومت نے قومی احتساب آرڈیننس اور فیڈرل انویسٹی گیشن ایکٹ میں مزید ترامیم متعارف کرانے پر اتفاق کیا ہے، ایک عبوری سرکاری رپورٹ سے پتہ چلتا ہے۔ یہ رپورٹ عالمی قرض دہندگان کے لیے ٹاسک فورس کے ذریعے پاکستان کے انسداد ٹرانسپلانٹ ماحول کے ادارہ جاتی فریم ورک کا جامع جائزہ لینے کی شرط کے طور پر آئی ایم ایف کو پیش کی گئی۔ ابتدائی رپورٹ کے مطابق ٹاسک فورس نے 1999 کے این اے او اور 1974 کے ایف آئی اے قوانین میں ترامیم کی سفارش کی۔ آئی ایم ایف نے گزشتہ سال شرائط کو ختم کیا جب حکومت نے سیاستدانوں اور بیوروکریٹس کو فائدہ پہنچانے کے لیے این اے او میں تبدیلیاں کیں۔ تاہم حکومت کو ٹاسک فورس کو منظم کرنے میں چھ ماہ لگے۔ اس کے بعد آئی ایم ایف کو پیش کی جانے والی عبوری رپورٹ کو حتمی شکل دینے کے لیے اس نے عجلت میں گزشتہ ماہ دو اجلاس بلائے۔ 27 دسمبر تک، اس نے انسداد بدعنوانی ایجنسی کے ادارہ جاتی فریم ورک کے جائزے کے لیے ٹاسک فورس کو مطلع کیا۔ وزیر انصاف اعظم نذیر طلال کو ٹاسک فورس کا کنوینر مقرر کر دیا گیا۔ وزیر داخلہ رانا صنعرہ، وزیر خزانہ عائشہ گوس پاشا، پنجاب کے سابق چیف سیکرٹری ناصر محمود کھوسہ اور سابق وزیر خزانہ یونس ڈھاگا دیگر اراکین میں شامل تھے۔ اپنی ایک تجویز کے مطابق، ٹاسک فورس نے سفارش کی کہ انسداد بدعنوانی ایجنسیوں کے دائرہ اختیار کی واضح وضاحت ہونی چاہیے۔ ایک اور اہم پہلو جس پر غور کرنے کی ضرورت ہے وہ ہے نیب کے دائرہ اختیار کی واضح تعریف۔ [the National Accountability Bureau] اور ایف آئی اے [Federal Investigation Agency] دونوں ایجنسیاں اکثر ایک جیسے جرائم کو تسلیم کرتی ہیں، اس لیے ان کے متعلقہ قوانین میں [raising] سنجیدہ سوال [the] بدعنوانی کے مقدمات کی سماعت کی مؤثریت پر عبوری رپورٹ پڑھیں۔ "کمیٹی نے اس بات پر اتفاق کیا کہ ہمارے جیسے نظام میں، زیادہ سخت سزائیں مطلوبہ نتائج نہیں دے سکتیں، لیکن یہ قابل اعتماد سزائیں ثابت ہو سکتی ہیں۔ [to be] مؤثر [form of] ڈیٹرنس، "انہوں نے مزید کہا۔ رپورٹ سے پتہ چلتا ہے کہ بدعنوانی کو روکنے کے لیے ادارہ جاتی سطح پر احتیاطی تدابیر اختیار کی جانی چاہئیں اور مشتبہ افراد کے جرم ثابت ہونے پر مقررہ سزا کی ضمانت دی جا سکتی ہے۔ ایک اور سفارش میں، ٹاسک فورس نے پبلک سیکٹر کے کھاتوں کی جانچ کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے انسداد بدعنوانی کے اداروں کے اہلکاروں کی استعداد کار بڑھانے کی تجویز بھی دی۔ رپورٹ کے مطابق ایف آئی اے دنیا کی واحد تحقیقاتی ایجنسی تھی جو ایئرپورٹس پر امیگریشن سروسز فراہم کرتی تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس کے تقریباً 50 فیصد وسائل امیگریشن سروسز پر خرچ کیے گئے، باقی کرپشن سمیت دیگر جرائم پر خرچ ہوئے۔ رپورٹ میں کہا گیا، "نتیجتاً، امیگریشن کی طرف سے تفویض کردہ تفتیش کاروں کے پاس بدعنوان طریقوں کی تفتیش اور مقدمہ چلانے کے لیے بنیادی معلومات اور مہارت کی کمی ہے۔” ٹاسک فورس نے ادارہ جاتی سطح پر بدعنوانی کو روکنے کے لیے چیف فنانشل اینڈ اکاؤنٹنگ آفیسر اور ایک چیف انٹرنل آڈیٹر مقرر کرنے کی سفارش کی۔ سرکاری ملازمین کے لیے جائیداد کے اعلانات کا مجوزہ عوامی انکشاف۔ ٹاسک فورس تسلیم کرتی ہے کہ پاکستان کے سائز کے ملک میں ایک موثر انسداد بدعنوانی نظام قائم کرنا کوئی قلیل مدتی عمل نہیں ہے بلکہ اس میں شامل ڈھانچے اور عمل کا جائزہ لینے کے لیے مسلسل کوششوں کی ضرورت ہے۔ ٹاسک فورس نے تصدیق کی کہ آئی ایم ایف کی طرف سے تجویز کردہ تقاضوں کا آئینی اور قانونی دائروں میں انسداد بدعنوانی کے طریقہ کار کے حوالے سے تجزیہ کیا جائے گا اور دیگر پہلوؤں کو مدنظر رکھتے ہوئے ان کی تعمیل کی جائے گی۔ رپورٹ میں اس پس منظر کی ایک جھلک پیش کی گئی جس کی وجہ سے نیب قانون پر نظر ثانی کی گئی۔ آئی ایم ایف نے کہا، "نیب کو سیاسی طور پر محرک مقدمے لا کر اور انفرادی حقوق کی خلاف ورزی کرنے کے لیے لبرل اور حد سے زیادہ اختیارات استعمال کر کے اپنے اختیارات سے تجاوز کرنے پر بڑے پیمانے پر تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔” نتیجتاً، تقریباً چھ ماہ قبل، ملکی پارلیمان نے 1999ء کی ترمیم کو متفقہ طور پر منظور کیا تھا تاکہ زیادتیوں کو روکا جا سکے اور نیب کے عملے کی استعداد کار کو مضبوط کیا جا سکے تاکہ بنیادی حقوق کی خلاف ورزی نہ ہو۔ قانون اور سب کے ساتھ قانون کے مطابق سلوک کیا گیا۔ قانونی حد مقرر کی گئی تھی کہ نیب 500 کروڑ روپے سے زیادہ ہونے کی صورت میں اسے پہچان سکتا ہے۔ اس قدر سے کم کوئی بھی چیز FIA یا ریاستی انسداد بدعنوانی ایجنسیوں کے دائرہ اختیار سے مشروط ہے۔ حکومت نے آئی ایم ایف سے کہا کہ اس پس منظر میں، ایجنسی کا بنیادی کردار بدعنوانی کی تحقیقات ہونا چاہیے، اس کے علاوہ تفتیش کاروں کی تربیت اور ترقی کے لیے وسائل مختص کیے جائیں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

تازہ ترین
سندھ کابینہ کی 30 کھرب روپے سے زائد کے بجٹ پروپوزل کی منظوری اپوزیشن ارکان کا ڈیسک پر بجٹ دستاویز مار کر احتجاج حکومت کا آدھے سے زیادہ ریونیو سود کی ادائیگی پر خرچ ہوگا، موڈیز اسٹاک ایکسچینج میں مثبت رجحان، انڈیکس 77 ہزار سے اوپر روشن ڈیجیٹل اکاؤنٹس 7 لاکھ 2 ہزار 610 ہو گئے ترقیاتی بجٹ کم کر دیتے تو زیادہ ٹیکس نہ لگانا پڑتا: مفتاح اسماعیل 18 ہزار ارب روپے سے زائد حجم کا وفاقی بجٹ آج پیش ہو گا پی ٹی آئی اور سنی اتحاد کونسل کی حکمتِ عملی طے گروتھ ریٹ کی 2030ء تک بھی ریکوری نہیں ہو سکے گی: زرتاج گل بجٹ میں جہاں فارم 47 والے پٹری سے اترے وہاں روکیں گے: ثناء اللّٰہ مستی خیل پی ایس ایکس 100 انڈیکس کے ایک دن میں کئی ریکارڈز زرمبادلہ ذخائر میں 60 لاکھ ڈالر کی کمی اسٹاک ایکسچینج میں بجٹ کے بعد تیزی، انڈیکس 72 ہزار سے 75 ہزار پر آ گیا زیادہ آمدن والوں پر زیادہ ٹیکس کے نفاذ پر اعتراض نہیں ہونا چاہیے: وزیرِ خزانہ اورنگزیب جو راستہ شہباز شریف نے اختیار کیا وہ مشکل اور کٹھن ضرور ہے، حکومت کو کچھ وقت دیں: علی پرویز ملک